En

پاکستان کی چمڑے کی برآمدات  کے لیے روشن  امکانات

By Staff Reporter | Gwadar Pro Dec 20, 2021

اسلام آباد (گوادر پرو) رواں  سال کی برآمدات واقعی اچھی رہی۔ ہماری برآمدات میں 14 فیصد تک اضافہ ہوا ہے۔ یہ بات ہائی ویز کریشنز پرائیویٹ لمیٹڈ کراچی کے مالک دانش خان نے گوادر پرو کو بتا ئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ چمڑے کے ملبوسات کی برآمد  سرفہرست ہے اور چمڑے کے دستانے دوسرے نمبر پر ہیں۔

وہ اکیلا نہیں ہے۔ مختلف مقامات پر لاک ڈاؤن میں نمایاں نرمی اور حکومت کی دانشمندانہ پالیسیوں کے ساتھ، چمڑے کی صنعت مستحکم بحالی کا مشاہدہ کر رہی تھی۔

 پاکستان ٹینرز ایسوسی ایشن کی سالانہ رپورٹ 202-21 کے مطابق جولائی تا جون  202-21 کے دوران پاکستان سے چمڑے اور چمڑے کی مصنوعات کی برآمدات اسی سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 8.86 فیصد بڑھ کر 765.355 ملین ڈالر سے  833.199 ملین ڈالر ہو گئیں۔ جو چمڑے کے برآمد کنندگان کے لیے اطمینان کا باعث ہے۔
 
پاکستان ٹینرز ایسوسی ایشن کے سابق چیئرمین آغا سیدین نے گوادر پرو کو بتایا کہ 2007-2008میں چمڑے کی برآمدات 1.25 بلین ڈالر سالانہ تھی اور اب یہ گھٹ کر 833 ملین ڈالر رہ گئی ہے۔  لیکن موجودہ حکومت کی پالیسیوں جیسے آن لائن سسٹم، سیلز ٹیکس پر ریفنڈ، اور ڈالر کی قیمت کی وجہ سے، ہم بحران سے بچ جاتے اور 2007-08 کے پچھلے اعداد و شمار کو چھو لیتے۔ 
 
جہاں تک چمڑے کی برآمدات کے ڈھانچے کا تعلق ہے، پاکستان بیورو آف شماریات کے مطابق مالی سال  2020-21کل برآمدات کا تقریباً 20 فیصد تیار چمڑے، 34 فیصد چمڑے کے ملبوسات، 31 فیصد دستانے، 13 فیصد جوتے اور 2 فیصد چمڑے کی مصنوعات پر مشتمل ہے۔ 
 
آغا سیدین نے کہا ان اعداد و شمار کے لیے یہ ایک  حیران کن  بات ہے کہ جوتے کی برآمد کم اور چمڑے کے ملبوسات کی زیادہ ہے۔ عالمی شخصیات ایسی نہیں ہیں۔ دنیا میں، چمڑے کی کل برآمدات کا 65 فیصد جوتے پر مشتمل ہے،ہم نے جوتے پر کام نہیں کیا، کوئی جوائنٹ وینچرز نہیں ہیں، کراچی میں امن و امان کی صورتحال بڑے برانڈز کے لیے نا مناسب تھی۔ 
 
  چین جوتے اور چمڑے کے سامان کی پیداوار میں پہلے نمبر پر ہے اور پاکستان لیبر کی کم لاگت کے ساتھ بڑے برانڈز کے لیے بہترین چمڑا تیار کرتا ہے، اس لیے انہوں نے کہا کہ  باہمی مفاد  کی صورتحال میں تعاون کے روشن امکانات ہیں۔ انہوں نے مشترکہ منصوبوں کو  سی پیک  کے خصوصی اقتصادی زونز میں شامل کرنے کی تجویز بھی دی۔
 
انہوں نے مزید کہا کہ ٹینریز پاکستان کے تمام خطوں سے خام مال کو پروسیس کر سکتی ہیں، یہاں تک کہ وہ جو ازبکستان، تاجکستان، ایران، افغانستان اور آذربائیجان سے درآمد کیے جاتے ہیں۔  فی الحال  ہم اپنی ٹیننگ کی صلاحیت کا صرف 50 فیصد استعمال کر رہے ہیں۔ پچاس فیصد مزید ٹیننگ کی صلاحیت موجود ہے۔ ٹیننگ کی صلاحیت کو بڑھانے میں کوئی وقت نہیں لگتا۔ 
 
اس کے علاوہ چین پاکستانی تیار چمڑے کا ایک بڑا درآمد کنندہ ہے جس کی بڑی آبادی اور زیادہ استعمال کی گنجائش ہے۔ پاکستان کو  سی پیک  کا فائدہ  ہے اور چین کے ساتھ طے پانے والے ایف ٹی اے سے چمڑے کی برآمد کو بہت فائدہ ہوتا ہے۔ دنیا میں فریٹ چارجز بہت زیادہ ہیں۔  800  ڈالر کا 20 فٹ کا کنٹینر  ڈالر3200 میں جاتا ہے۔ اگر اسے  سی پیک  کے ذریعے چین پہنچایا جاتا ہے تو یہ شاندار ہو گا۔
 
آغا سعید نے مویشیوں پر توجہ دینے پر بھی زور دیا کیونکہ جانوروں کی  کھال  کا تعلق جانوروں کی صحت سے ہے۔ انہوں نے کہا کہ جلد کی خرابیاں اور جلد کی بیماریاں جو اب پاکستان میں آرہی ہیں اگر ان پر قابو پالیا جائے تو ہم اپنی برآمدات کو 23 فیصد تک بڑھا سکتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ اب اس موضوع پر یونیورسٹی آف ویٹرنری سائنسز کے تعاون سے تحقیق کی گئی ہے۔ انہوں نے پایا کہ یہاں سے 23 فیصد برآمدات ختم ہو رہی ہیں۔
 
 
  انہوں نے کہا  اب پاکستان میں 800 ٹینریز ہیں، جن میں سے بڑی ٹینریز کا حصہ صرف 10 فیصد ہے، پھر درمیانے اور چھوٹے ٹینریز باقی حصہ لیتے ہیں ۔ اگرچہ بہت سی کمپنیاں تیزی سے  ایل ڈبلیو جی  سرٹیفیکیشن حاصل کر رہی ہیں، پھر بھی کچھ اسے ایک ٹریٹمنٹ پلانٹ کی وجہ سے برداشت نہیں کر سکتیں جس کی لاگت تقریباً 15 سے 20 کروڑ (150-200 ملین روپے) ہے۔  اگر انہیں سبسڈی دی جاتی ہے، مالی امداد دی جاتی ہے، اور وہ ٹریٹمنٹ پلانٹس لگاتے ہیں اور   ایل ڈبلیو جی سرٹیفیکیشن کے لیے اہل ہوتے ہیں تو پاکستانی چمڑے کی صنعت کا مستقبل بہت اچھا ہے 
 
اس کے علاوہ اب بھی خدشات موجود ہیں۔ کراچی میں چمڑے کی مصنوعات بیچنے والے آصف قائم خانی نے گوادر پرو کو بتایا کہ چمڑے کے کاریگروں کی تعداد کم ہو رہی ہے۔  چمڑے کے کاریگروں کی آخری نسل، جو شاگرد تھے، اب مشینوں کے ساتھ کام کرنے والے ماسٹر بن چکے ہیں۔ ان کی بینائی کمزور ہو گئی ہے، جب وہ ریٹائر ہو جاتے ہیں تو ان کے جانشین کم ہوتے ہیں۔
 
 لیدر فیکٹری کے ایک سپروائزر نے مزدوروں کے لیے  جدید ترین  مشینری کی ضرورت پر زور دیا تاکہ وہ اپنے کام کو موثر طریقے سے انجام دے سکیں۔ اس کے علاوہ گیس کی قلت کا بھی ذکر ہے۔

  • comments
  • give_like
  • collection
Edit
More Articles