En

مومیاتی تبدیلی سے نمٹنے کیلئے چین کیساتھ تعاون نا گزیر ہے،پاکستانی عہدیدار

By Staff Reporter | Gwadar Pro Aug 17, 2022

اسلام آباد  (چائنا اکنامک نیٹ) چین کی ٹیکنالوجی مغربی ممالک کا مقابلہ کر سکتی ہے  اور پاکستان کے لیے چین سے اس کو  اپنانا امریکہ اور یورپ کے مقابلے میں آسان ہو گا،  اسی لیے پاکستان کو موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کے لیے چین کے ساتھ تعاون کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار پاکستان کی وزارت موسمیاتی تبدیلی  کے  ایڈیشنل سیکرٹری   جودت ایاز  چائنا ا کنامک نیٹ کو انٹریو  میں کیا۔

انہوں نے کہا بدقسمتی سے پاکستان کا چین کے ساتھ موسمیاتی تبدیلی کے حوالے سے اتنا واضح تعاون نہیں ہے۔ جودت ایاز نے نشاندہی کی کہ کچھ تاریخی وجوہات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عام طور پر پاکستان اقوام متحدہ کے ذرائع یا کثیر جہتی ذرائع سے فنڈنگ حاصل کرتا تھا۔

 جودت ایاز نے رپورٹر کو بتایا گزشتہ دہائی کے اعداد و شمار سے وہ بتا سکتے ہیں کہ چین ماحولیاتی تحفظ کے حوالے سے زیادہ سے زیادہ باشعور ہو گیا ہے۔ اب تک چین کے ساتھ اتنا تعاون نہیں تھا، لیکن ''میں کہوں گا کہ اس میں بہت زیادہ صلاحیت ہے کیونکہ چین خود اپنے ماحول اور اپنے ایکو سسٹم کو بہتر بنانے کے بارے میں باشعور ہے  اور اس نے جنگلات میں بہت کامیابی سے کام کیا ہے۔ بانس پر بہت اچھے اقدامات کیے گئے ہیں اور پاکستان ان سے بہت کچھ سیکھ سکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ چین کی ٹیکنالوجی اس سطح پر کھڑی ہے جہاں وہ مغربی ممالک کا مقابلہ کر سکتا ہے۔ زیادہ جنوب جنوب تعاون ہونا چاہیے اور میں اس کا بہت بڑا حامی ہوں۔ ہمارے لیے چین سے حل اپنانا امریکہ اور یورپ کے مقابلے میں آسان ہوگا کیونکہ ہم ان کی ٹیکنالوجی کو اس طرح نقل نہیں کر سکتے جیسا کہ ہے۔

جودت ایاز نے چائنہ اکنامک نیٹ کو بتایا کہ مثال کے طور پر، چین میں ''سپنج سٹی'' کا تصور ہے جہاں بارش کو رساو کے ذریعے مٹی میں جذب کیا جاتا ہے۔  جب اسے خشک کیا جاتا ہے تو یہ آپ کو مٹی کا اثر دیتا ہے جیسے یہ فضا میں پانی چھوڑتی ہے۔ تاہم ایسا میگا پراجیکٹ پاکستان کے کسی شہر میں نہیں دیکھا گیا۔ اور متعلقہ ٹیکنالوجی اس سطح پر پہنچ چکی ہے کہ ہمیں اس کے بارے میں سوچنا شروع کر دینا چاہیے۔

جیسا کہ انہوں نے بتایا کہ آج بھی لاہور، اسلام آباد اور کراچی میں بہت بارش ہوئی تھی۔  ہمارے شہری مراکز 2 سے 3 انچ بارش کے لیے تیار نہیں ہیں۔ جب بارش ہوتی ہے تو زمین پر 2 سے 3 فٹ تک پانی کھڑا رہتا ہے۔ ہمیں اس پانی کو چین جیسی رین فال ہارویسٹنگ تکنیک کے ذریعے استعمال کرنے کی ضرورت ہے تاکہ پانی کو کم سے کم نقصان پہنچایا جا سکے۔ کچھ دوسرے شعبوں میں استعمال کیا جاتا ہے جیسے زراعت کے شعبے میں متبادل کے طور پر۔

انہوں نے سی ای این  کو بتایا کہ میں نے چین کا سات سے آٹھ مرتبہ دورہ کیا ہے، پاکستان موسمیاتی تبدیلی پر چین کا دروازہ کبھی بند نہیں کرے گا۔ اگر آپ چین گئے ہوتے اور اسے اچھی طرح جانتے ہوتے تو آپ کو معلوم ہوتا کہ ارومچی سے کاشغر تک ایک بار صحرا تھا، انہوں نے دونوں طرف درخت لگائے ہیں اور زمین کی تزئین کو بدل دیا ہے۔ اسی طرح ہمارے پاس جنگلات کے پروگرام کو پوری دنیا میں سراہا گیا اس طرح، ہم اس قسم کے علاقے میں چین کے ساتھ تعاون کرنے کی اعلیٰ صلاحیتوں سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

 جودت ایاز نے کہا کہ دونوں برادر ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید گہرا کرنے کے لیے  ماہرین کے تبادلے، کانفرنسیں اور نیٹ ورکنگ اہم  ہیں  کیونکہ یہ دونوں فریقوں کو یہ جاننے میں مدد کرتے ہیں کہ کہاں اور کیسے تعاون کرنا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان چین سے مقامی سطح پر  حل کے بارے میں بہت کچھ سیکھ سکتا ہے۔

  • comments
  • give_like
  • collection
Edit
More Articles