En

کروٹ ہائیڈرو پاور پلانٹ حتمی پری کمیشننگ ٹیسٹ کے مرحلے میں داخل

By Staff Reporter | Gwadar Pro Jun 22, 2022

اسلام آباد (گوادر پرو)720 میگاواٹ کا کروٹ ہائیڈرو پاور پلانٹ منگل کی صبح 168 گھنٹے طویل ریلائیبلٹی رن ٹیسٹ (آر ٹی ٹی) کے بعد کمرشل آپریشن شروع کرنے سے ایک ہفتہ دور ہے۔

کروٹ پاور کمپنی کے ایک سینئر اہلکار نے گوادر پرو کو بتایا کہ آر ٹی ٹی اس منصوبے کے شروع ہونے سے پہلے آخری ٹیسٹ ہے۔ کروٹ پاور ایک خاص مقصد والی گاڑی ہے جسے پاکستان میں چائنا تھری گورجز (سی ٹی جی) کے ذیلی ادارے  ساؤتھ ایشیا انویسٹمنٹ لمیٹڈ کے ذریعے  عملی جامہ پہنانے کے لیے شامل کیا گیا ہے۔

اہلکار نے بتایا کہ ٹیسٹ رن 21 جون کو صبح   ساڑھے  نو بجے شروع کیا گیا تھا اور 28 جون کو اختتام پذیر ہو گا، جس کے بعد پلانٹ کے چاروں یونٹ پورے پیمانے پر بجلی پیدا کرنے کے لیے تیار ہو جائیں گے۔

کروٹ چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) اقدام کے تحت پہلا پن بجلی منصوبہ ہے جو 1.72 بلین ڈالر کی لاگت سے مکمل کیا جائے گا۔ یہ منصوبہ صاف اور سستی بجلی فراہم کرکے پاکستان کی توانائی کی حفاظت میں اہم کردار ادا کرے گا۔

رن آف ریور سہولت پہلے ہی قومی گرڈ میں مفت بجلی فراہم کر رہی ہے۔ وزیر اعظم شہباز شریف نے کروٹ کے حالیہ دورے کے دوران کہا تھا کہ یہ پلانٹ جب تک  کمرشل آپریشن شروع نہیں کرتا پاکستانی عوام کو بطور تحفہ نیشنل گرڈ کو 4 ارب روپے کی مفت بجلی فراہم کرے گا۔ سینٹرل پاور پرچیزنگ اتھارٹی (سی پی پی اے) کے مطابق  اس منصوبے نے مئی میں نیشنل گرڈ میں 244.25 ملین یونٹ مفت بجلی فراہم کی۔

اہلکار نے کہا کہ آر ٹی ٹی کو انڈیپنڈ نٹ    انجینئرز اور متعلقہ سرکاری محکموں کے اہلکار دیکھ رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ آر ٹی ٹی سے پہلے پلانٹ نے 720 میگاواٹ کی مکمل صلاحیت کے ساتھ لوڈ ریجیکشن ٹیسٹ کامیابی سے گزارا۔ یہ ایک اہم امتحان ہے جس میں چلنے والے یونٹ سے بوجھ کو اچانک ہٹا دیا جاتا ہے تاکہ یہ چیک کیا جا سکے کہ آیا یہ پاور پلانٹ کے ٹرپ ہونے کی صورت میں الیکٹرو مکینیکل تنصیبات اور سول فاؤنڈیشن کو نقصان پہنچائے بغیر محفوظ طریقے سے بند ہو جاتا ہے۔ اہلکار نے کہا کہ رد عمل کی صلاحیت کا ٹیسٹ بھی کامیاب رہا۔

توقع ہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف 30 جون کو سی پیک کے اس تاریخی کلین اور سستے  توانائی منصوبے کا افتتاح کریں گے۔

  • comments
  • give_like
  • collection
Edit
More Articles