En

بھارتی میڈیا کے لیے سی پیک کو بدنام کرنا نقصان دہ ہے،اسکالر

By Staff Reporter | Gwadar Pro Feb 19, 2022

بیجنگ (گوادر پرو) وزیراعظم عمران خان نے بیجنگ سرمائی اولمپک گیمز 2022 کی حمایت کے لیے چین کا دورہ کیا اور کہا کہ پاکستان ہمیشہ چین کے سیاسی موقف کی حمایت کرے گا۔ اس کے جواب میں بھارتی میڈیا نے پاک چین تعلقات کو خراب کرنے کی بیکار کوشش میں سی پیک کو بدنام کرنے کے لیے بہت سارے جھوٹے بیانات جاری کیے۔ جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں، بھارتی میڈیا جعلی خبروں کے ذریعے بین الاقوامی امن کو تباہ کرنے کا عادی مجرم ہے ۔ ان کے اقدامات سی پیک کی تعمیر میں رکاوٹ نہیں بنیں گے۔ اس کے بجائے، یہ ان کے اپنے لیے نقصان دہ ہے اور وہ اپنے پاو¿ں پر کود ہی کلہاڑی ماریں گے ۔ یہ بات شنگھائی اکیڈمی آف سوشل سائنسز (SASS) کے انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل اسٹڈیز (IIR)، چائنا-جنوبی ایشیا ریجنل سیکیورٹی کونسل کے ڈپٹی چیئرمین اور سیکریٹری جنرل پروفیسر ہو چی یونگ نے گوادر پرو کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں کہی۔
 
ہو نے کہا بھارتی میڈیا سی پیک کو بدنام کرتا ہے کیونکہ ان کے پاس نہ تو بنیادی صحافتی پیشہ ورانہ مہارت ہے اور نہ ہی بین الاقوامی تعلقات کی واضح سمجھ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاک چین تعلقات ہر موسم کی تزویراتی شراکت داری ہے۔ سی پیک چین کے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو کا فلیگ شپ منصوبہ ہے، لہٰذا دونوں ممالک کی دوستانہ ترقی نے کچھ بھارتی سیاست دانوں کو بہت رشک کیا ہے۔ جب چین بی آر آئی کے ساتھ آیا تو ہندوستان نے اس بنیاد پر بی آر آئی میں شامل ہونے سے انکار کردیا کہ سی پیک کشمیر کے متنازعہ علاقے سے گزر کر ہندوستان کی خودمختاری کی خلاف ورزی کرتا ہے۔ درحقیقت سی پیک اس علاقے کو بالکل نہیں چھوتا۔ لہذا، ہندوستانی حکومت اور میڈیا حالیہ برسوں میں سی پیککے حاصل کردہ نتیجہ خیز نتائج پر رشک کر رہا ہے۔ دوسری طرف بھارتی میڈیا میں صحافتی پیشہ ورانہ مہارت کا فقدان ہے۔ ہندوستان کا میڈیا زیادہ تر نجی ملکیت میں ہے، اور مزید قارئین کو راغب کرنے کے لیے، مقامی سامعین کے قومی جذبات کو پورا کرنے کے لیے جعلی خبریں تیار کی جاتی ہیں ۔

ہندوستانی حکومت کہنا چاہتی ہے لیکن کہنے سے ڈرتی ہے، وہ اکثر ہندوستانی میڈیا کی طرف سے کہا جاتا ہے تاکہ ہندوستانی حکومت چین اور پاکستان کے ساتھ مذاکرات میں مزید فائدہ اٹھا سکے۔ انہوں نے مزید کہا یہاں ایک بہت ہی عام مثال ہے۔ پچھلے کچھ سالوں میں، چین اور پاکستان نے کئی ایسے کیسز کا پتہ لگایا ہے کہ ہندوستانی سی پیک کی تعمیراتی سائٹس کو سبوتاژکر رہے ہیں۔ لیکن ان معاملات کو پاکستان اور چین کی طرف سے مشترکہ طور پر حل کرنے کے بعد، بھارتی میڈیا نے اسے الٹا کر دیا اور اصرار کیا کہ تخریب کاری کے ذمہ دار پاکستانی ہیں۔

ہو نے کہا پاک چین بھارت تعلقات میں عدم استحکام کی وجہ بھارتی حکومت ہے۔ چین پاکستان تعلقات ہر موسم میں تعاون کے اسٹریٹجک شراکت دار ہیں۔ چین بھارت تعلقات میں اتار چڑھاو¿ آئے ہیں۔ ابھی تک پاک بھارت تعلقات معمول کی طرف نہیں بڑھے۔ اس کی دو بنیادی وجوہات ہیں۔ پہلا بھارتی حکومت کی بے عملی ہے، اور دوسرا مودی حکومت کی طرف سے اپنی دوسری مدت میں بھارت میں نام نہاد ہندو قوم پرستی کو ہوا دینا ہے۔ درحقیقت، بھارتی حکومت، جب ملکی معیشت بحال اور ترقی نہیں کر پا رہی ہے، وہ اپنے برسوں اقتدار کو برقرار رکھنے کے لیے، گھریلو لوگوں کی توجہ ہٹانے کے لیے پاک چین-بھارت سرحد پر مشکلات پیدا کر رہی ہے۔ یہ ان کی روایت ہے ۔

بھارتی میڈیا کے جھوٹے ریمارکس سے پاک چین تعلقات نہیں ٹوٹ سکتے۔ ہو نے کہا سچ پوچھیں تو، بھارت کی طرف سے سی پیک کو سبوتاژکرنے کی کوشش سے بھارت اور پاکستان میں کچھ لوگ حقیقت سے واقف نہیں ہیں، یہ غلط تاثر دے سکتے ہیں کہ سی پیک واقعی غلط ہو رہا ہے۔ لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ پاکستان اور بھارت میں لوگوں کو پتہ چل جائے گا کہ ایسا نہیں ہے اور وہ بھارتی میڈیا پر سے اعتماد کھو بیٹھیں گے۔ لہٰذا، بھارتی میڈیا کا سی پیک کے بارے میں غلط بیانی ایک بار عملی طور پر جانچنے کے بعد ناقابل برداشت ہے، اور یہ صرف کچھ قلیل مدتی اثرات حاصل کر سکتا ہے۔ طویل عرصے میں یہ اپنے پاو¿ں پر خود ہی کلہاڑی مار رہا ہے. اس لیے میں ہندوستانی میڈیا کو مشورہ دینا چاہوں گا کہ وہ حقائق کے برعکس جھوٹی خبریں پھیلانے کے بجائے رپورٹنگ میں معروضی، منصفانہ اور غیر جانبدار رہیں، ، اس سے ہندوستانی میڈیا اور ہندوستانی حکومت کا امیج خراب ہوگا۔

  • comments
  • give_like
  • collection
Edit
More Articles