En

سی پیک کے تحت 79   فی صد موٹر ویز اور 68   فی صد ہائی ویز مکمل

By Staff Reporter | Gwadar Pro Jan 1, 2022

اسلام آباد  (گوادر پرو)   پاکستان کی وزارت مواصلات کے حکام نے تصدیق کی ہے کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) کے مشرقی اور مغربی  روٹ  پر اب تک موٹر ویز پر 79 فیصد اور ہائی ویز پر 68 فیصد کام مکمل ہو چکا ہے۔

مغربی اور مشرقی دونوں صف  روٹ  درہ خنجراب کو گوادر سے جوڑ یں  گے۔ خنجراب سے برہان تک 790 کلومیٹر سڑک اور    ہوشاب سے گوادر تک 193 کلومیٹر سڑک سمیت تینوں مشرقی، مغربی اور وسطی  روٹس کی مشترکہ الائنمنٹ پہلے ہی مکمل ہو چکی ہے۔

برہان مشرقی اور مغربی  روٹس  کے چوراہے پر ہوگا۔ حکام کے مطابق اسلام آباد سے کراچی شروع ہونے والے مشرقی روٹ کا فاصلہ 1419 کلومیٹر ہے جس میں سے موٹر ویز پر 79 فیصد کام مکمل ہو چکا ہے جب کہ 21 فیصد رہ گیا ہے جو کہ 306 کلومیٹر سکھر حیدرآباد موٹروے ہے۔

 سی پیک کے مشرقی روٹ میں یہ واحد پیچ  باقی ہے۔ سکھر حیدرآباد موٹروے آئندہ 30 ماہ میں مکمل ہونے کی امید ہے۔ ٹینڈر جیتنے والی کمپنی کو پہلے ہی اس کی تعمیر شروع کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

دوسری جانب سی پیک کا مغربی روٹ اسلام آباد سے ڈی آئی خان، پھر ڈی آئی خان سے کوئٹہ اور کوئٹہ سے گوادر تک شروع ہوتا ہے۔ مشترکہ روٹس  کو چھوڑ کر، اس راستے کی کل لمبائی 1,714 کلومیٹر ہے۔ جن میں سے 68 فیصد مکمل ہو چکا ہے جبکہ 32 فیصد زیر تعمیر ہے۔

اسلام آباد تا ڈی آئی خان موٹروے حال ہی میں مکمل ہوئی ہے۔  سی پیک  کے مغربی روٹ کا انتہائی اہم لنک ڈی آئی خان سے ژوب اور کوئٹہ ہے جو کہ 540 کلومیٹر کا پیچ ہے۔ یہ پیچ زیر تعمیر ہے جس کے 2024 تک مکمل ہونے کی امید ہے۔

موٹروے کے اس پیچ کی تکمیل کے بعد ویسٹرن الائنمنٹ بھی مکمل ہو جائے گی۔ باقی مغربی الائنمنٹ پیچ بشمول کوئٹہ سے سوراب، جو 235 کلومیٹر ہے، اور سوراب سے ہوشاب، جو 449 کلومیٹر ہے، بھی کام کر رہا ہے۔

 سی پیک کے آغاز کے ساتھ ہی کارگو ٹرانسپورٹ کے لیے تین راستوں کی نشاندہی کی گئی۔ مشرقی صف بندی سندھ اور پنجاب کے بہت زیادہ آبادی والے صوبوں سے گزرتی ہے جہاں زیادہ تر صنعتیں واقع ہیں۔

مغربی صف بندی خیبرپختونخوا اور بلوچستان کے کم ترقی یافتہ اور کم آبادی والے صوبوں سے گزرتی ہے، اور مستقبل کی مرکزی صف بندی خیبر پختونخوا، پنجاب اور بلوچستان سے ہو کر گزرے گی۔

ذرائع نے تصدیق کی کہ دو صف بندی یعنی مشرقی اور مغربی 2025 تک مکمل ہونے کی توقع ہے اور تیسری مرکزی صف بندی 2030 تک مکمل ہو جائے گی۔

  • comments
  • give_like
  • collection
Edit
More Articles